پاکستان کے 20 غریب ترین اضلاع کے لیے 40 ارب روپے کے پانچ سالہ منصوبے کا آغاز

اسلام آباد:پاکستان کے 20 غریب ترین اضلاع کے لیے 40 ارب روپے کے خصوصی ترقیاتی اقدامات پر مشتمل پانچ سالہ منصوبے کا آغاز،اضلاع کا انتخاب کثیر جہتی غربت انڈیکس کے اسکور کی بنیاد پر کیا گیا،پاکستان میں علاقائی تفاوت اور ناہموار ترقی قومی معیشت کیلئے تشویش کا باعث،پائیدار اقتصادی ترقی کے حصول کے لیے دیہی اور شہری علاقوں کے درمیان وسائل کی موثر تقسیم ضروری۔ویلتھ پاک کی رپورٹ کے مطابق پاکستان میں علاقائی تفاوت اور ناہموار ترقی پالیسی سازوں کے لیے اہداف کے تعین اور معاشی، سماجی اور جغرافیائی تناظر میں مطلوبہ نتائج حاصل کرنے کے لیے خاص طور پر تشویش کا باعث ہیں۔سینٹر آف پاکستان اینڈ انٹرنیشنل ریلیشنز کے چیئرمین خالد محمود نے ویلتھ پاک سے بات کرتے ہوئے کہا کہ صوبوں، ضلعی سطح پر اور دیہی اور شہری علاقوں کے درمیان عدم مساوات کے نتائج برآمد ہوتے ہیں۔

شہری اور دیہی ترقی کے لحاظ سے، پاکستان عام دوہری ساختی خصوصیات کا مظاہرہ کرتا ہے۔ کسی بھی قوم کے لیے دیہی علاقے معاشی ترقی کے عمل میں بہت بڑا حصہ ڈالتے ہیں، لیکن شہری اور دیہی ترقی کی سطحوں کے درمیان فرق متوازن اور اعلی معیار کی ترقی میں کوتاہیوں کا باعث بنتا ہے۔پائیدار اقتصادی ترقی کے حصول کے لیے متوازن ترقی کے ساتھ ساتھ دیہی اور شہری علاقوں کے درمیان وسائل کی موثر تقسیم بھی ضروری ہے۔

پاکستان کی اقتصادی ترقی کو تیز کرنے کے لیے دیہی علاقوں کی ترقی ناگزیر ہے۔منصوبہ بندی کمیشن میں سیاسیات کے ماہر اور عوامی پالیسی کے تجزیہ کار ڈاکٹر عدنان رفیق نے ویلتھ پاک کو بتایا کہ پاکستان کے چاروں صوبے رقبے، آبادی اور معاشی اور سماجی ترقی کے لحاظ سے غیر مساوی ہیں۔انہوں نے کہا کہ پاکستان کی جغرافیائی ساخت اس بات کی نشاندہی کرتی ہے کہ صوبوں کے زیادہ تر بڑے دارالحکومت دوسرے شہروں کے مقابلے نسبتا زیادہ ترقی یافتہ ہیں۔

ان 20 اضلاع کا انتخاب کثیر جہتی غربت انڈیکس کے اسکور کی بنیاد پر کیا گیا ہے، جس میں بلوچستان کے 11 اضلاع، سندھ کے پانچ اضلاع، خیبر پختونخوا کے تین اضلاع اور پنجاب کا ایک ضلع شامل ہے۔ حالیہ سیلاب سے ہونے والے بڑے نقصانات میں بلوچستان اور سندھ کے مزید اضلاع شامل ہیں۔پاکستان انسٹی ٹیوٹ آف ڈویلپمنٹ اکنامکس کے جوائنٹ ڈائریکٹر ڈاکٹر در نایاب نے کہا کہ پاکستان کو مختلف خطوں کے ترقیاتی عمل میں نمایاں تغیرات کا سامنا کرنا پڑا ہے جس کی وجہ سے پاکستان کے مختلف خطوں کے اندر اور ان کے درمیان تفاوت پیدا ہوا ہے۔ انہوں نے کہا کہ چھوٹے شہروں کی ترقی میں نمایاں صلاحیت موجود ہے۔ انہوں نے کہا کہ کسی ملک کے اندر سرمایہ کاری کی زیادہ منصفانہ تقسیم مضبوط اقتصادی کارکردگی کا باعث بنتی ہے۔

انہوں نے نشاندہی کی کہ کم ترقی یافتہ علاقے زیادہ تر صوبہ بلوچستان میں شامل ہیں۔ علاقائی اور صوبائی سطح پر یہ تمام اختلافات تنازعات اور سیاسی عدم استحکام کو جنم دیتے ہیں۔انہوں نے کہاچھوٹے صوبوں کے خدشات سالانہ پبلک سیکٹر ڈویلپمنٹ پروگرام کے ذریعے وفاقی ترقیاتی اخراجات اور صوبوں کو دی جانے والی گرانٹس میں توازن کی کمی سے مزید بڑھ گئے ہیں۔ڈاکٹر عدنان نے بتایا کہ منصوبہ بندی، ترقی اور خصوصی اقدامات کی وزارت نے حال ہی میں پاکستان بھر کے 20 غریب ترین اضلاع کے لیے 40 ارب روپے کے خصوصی ترقیاتی اقدامات پر مشتمل پانچ سالہ (2022-27) منصوبے کا آغاز کیا ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *